Wednesday, 19 December 2018

اس ہفتےکی حدیث

پيغمبراکرم(ص) فرماتے تھے كہ :

 

فاطمہ (س) ميرے جسم كا ٹكڑا ہے جو اسے خوشنود كرے گا اس نے مجھے خوشنود كيا، اور جو شخص اسے اذيت دے گا اس نے مجھے اذيت دى سب سے عزيزترين ميرے نزديك فاطمہ (س) ہيں

 

 (مناقب ابن شہر آشوب، ج 3 ص 332)

قارئین کی تعداد

آج 12

کل 35

اس هفته 61

اس ماه 234

ٹوٹل 22075

  تىن آدمى باهرسے شهرمدىنه مىں داخل هوئے۔ رات کاوقت تھا۔ ىه تىنوں رسول خدا صلى الله عليه وآله وسلم

کےخدمت مىں جاناچاهئتے تھے لىکن کچھ سوچ کر آپس مىں ىه کهنے لگے :

اگر هم تىنوں پىغمبراکرم صلى الله عليه وآله وسلم کى خدمت مىں چلے جائىں توممکن هے رات کے وقت انهىں زحمت هولهذا همىں مختلف مقامات پرجاکرٹھهرنا چاهئىے!

اىک نے کها:

مىں پىغمبراکرم صلى الله عليه وآله وسلم کے گھرجاؤں گا.

دوسرے نے کها:

مىں على مرتضىٰ عليه السلامکے گھر جاؤں گا.

تىسرے نے کها:

مىں مسجدمىں جاکر الله کا مهمان بنوں گا.

 

دوسرے دن ىه تىنوں مسجد مىں جمع هوئے اور هر اىک نے اپنے ساتھ پىش آنے والى صورت حال بىان کى.

پىغمبر اکرم صلى الله عليه وآله وسلم کے گھر جانے والےمهمان نےکها:

نبى کرىم صلى الله عليه وآله وسلم نے مجھےاپنى خوراک مىں شرىک کىا اور مىں نے ان کے ساتھ دودھ کى صورت مىں موجود غذا کھاکر سىر هوگىا اور رات بھر آرام سے سوىا.

دوسرے نے بھى ىهى بتاىا که مىں على عليه السلام کے ساتھ کھانے مىں شرىک هوا اور شکم سىر هوکر سوگىا!

تىسرے نے کها:

مىں رات بھربھوکا رها اور ٹھىک طرح سے سو بھى نه سکا!

پىغمبراکرم صلى الله عليه وآله وسلم پر وحى نازل هوئى که همارے مهمان سے کهه دو:

اگر شکم سىرى, بھوک سے بهترهوتى تو هم تمهارى مهمان نوازى کرتے!

ىه خىال مت کىجىے که پىٹ بھرکر کھلانے کانام هى مهمان نوازى هے۔ جب پىٹ بھر جاتاهے تواس سے جسم اور روح دونوں زحمت مىں پڑجاتےهىں ۔ انسان کى طبىعت بوجھل هوجاتى هے۔ وه اپنى موت کو بھلا بىٹھتاهے ۔ اس کا دل خضوع وخشوع سے خالى هوجاتاهے اور اسےدوسروں کے رنج وغم کا احساس نهىں رهتا۔ جوبھى خىروبرکت اورعافىت ورحمت هے وه بھوک اور مختصرکھاناکھانے مىں هے.